Lamha lamha

بارش فریب کی برستی رہی لمحہ لمحہ
جفا مجھ پہ ہنستی رہی لمحہ لمحہ

آدمی نہ فرشتہ ہی کوٸی آیا بچانے
انسانیت تڑپتی رہی لمحہ لمحہ

آیا نہ جب رونا ضمیر کی موت پر
;کٸ دن پھر روح بلکتی رہی لمحہ لمحہ

صنم اور خدا کے بیچ تا عمر
زندگی اُلجھتی لڑکھڑاتی رہی لمحہ لمحہ

ایمان کچا تھا یا مسٸلہ نیا تھا
سوچ خدا میں اُلجھتی رہی لمحہ لمحہ

انا اور محبت کی کشمکش میں، ہر بار
ذات ہی بکھرتی رہی لمحہ لمحہ

This poem is about: 
Me

Comments

Need to talk?

If you ever need help or support, we trust CrisisTextline.org for people dealing with depression. Text HOME to 741741